بیان کیسے ہو عظمت رسولِ اکرم کی

بیان کیسے ہو عظمت رسولِ اکرم کی

خدا ہی جانے حقیقت رسولِ اکرم کی

 

عروجِ نوعِ بشر کے لیے یہ کافی ہے

رہے نظر میں شریعت رسولِ اکرم کی

 

کسی کے وہم و گماں میں نہ آ سکے گی کبھی

کہاں ہے سرحدِ رفعت رسولِ اکرم کی

 

خدا اور اس کے ملائک تو کرتے ہیں ہر دم

اے مومنو! کرو مدحت رسولِ اکرم کی

 

خدا ہے ان کا خدا کے ہیں یہ خدا کی قسم

خدائی پر ہے حکومت رسولِ اکرم کی

 

طواف کرتے ہیں اُس دل کا تو ملائک بھی

بسی ہے جس میں محبت رسولِ اکرم کی

 

اسی لیے تو کہا والضحیٰ و یٰسیں بھی

کہ رب کو پیاری ہے صورت رسولِ اکرم کی

 

زمین کیا ہے فلک پر بھی ہے رضاؔ چھائی

خدا کے فضل سے رحمت رسولِ اکرم کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سنا ہے شب میں فرشتے اُتر کے دیکھتے ہیں
ایسا تجھے خالق نے طرح دار بنایا
رحمت نہ کس طرح ہو گنہگار کی طرف
حضورِ کعبہ حاضر ہیں حرم کی خاک پر سر ہے
مرے آقاؐ، کرم مُجھ پر خُدارا
آپؐ کے پیار کے سہارے چلوں
نبیؐ کا گُلستاں ہے اور میں ہوں
ذکرِ نبیؐ سے ہر گھڑی معمُور ہوتا ہے
نہیں بیاں کی ضرورت، حضور جانتے ہیں
کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا

اشتہارات