اردوئے معلیٰ

بے دلی کا کوئی توڑ ، ائے وحشتو؟

کچھ مداوائے یکسانیت ، شاعری ؟

 

ترمروں کے سوا کچھ بدلتا نہیں

دشتِ بے شکل کی اف یہ کم منظری

 

کچھ رفُو ہے کہیں ؟ چاکِ دل کے لیے

کانچ کے خواب کی کوئی شیشہ گری؟

 

کوئی جنبش نہیں شوقِ پامال میں

سانس کا زیر و بم ، نہ کوئی جھرجھری

 

نارساء اب کسی دوش کا آسرا

نا میسر کسی لمس کی رہبری

 

مطمئن ہے دلِ کم سخن مرگ پر

کوئی ماتم نہیں اب نہ نوحہ گری

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات