اردوئے معلیٰ

بے سبب مہکا نہیں ہے خانۂ آزردگاں

بے سبب مہکا نہیں ہے خانۂ آزردگاں

دل کے صحرا میں آئی بادِ کوئے مہرباں

 

مطمئن ہے قاصرِ نقدِ عمل ، تو کیا عجب

تیری رحمت بے تعطل ، تیری بخشش بیکراں

 

ہو نہیں سکتا تعین جاں سے بڑھ کر قُرب کا

معنئ تمثیلِ اَولیٰ ، مہبطِ حذبِ نہاں !

 

ارضِ طلعت زار پر ہے روشنی ہی روشنی

پائے زائز سے لپٹتی جا رہی ہے کہکشاں

 

تُو یقیں کے اوج پر ہے محوِ انوارِ الہٰ

عرصۂ تکویں میں ہی اُلجھا ہُوا ہے خاکداں

 

لے کے آیا ہُوں تری چوکھٹ پہ فردِ معصیت

صاحبِ عفوِ معالی ، چارہ سازِ عاصیاں !

 

بوسہ گاہِ رفعتِ افلاک ہے تیری زمیں

تیرا حُجرہ عرشِ عظمت ، تیرا گنبد آسماں

 

کھینچتا ہُوں خامۂ دل کو بہ آہنگِ نیاز

باندھتا ہُوں مصرعِ مدحت بہ طرزِ تارِ جاں

 

منعکس ہوتے ہیں حیرت یاب منظر دم بدم

طاقِ دل میں ہے چراغِ اسمِ احمد ضَوفشاں

 

قاطعِ تاویل ہے ہر گفتۂ صادق ترا

تا ابد باقی رہے گا تیرا قولِ جاوداں

 

جادۂ احساس پر مقصودؔ حیرت نقش ہے

مَیں کہاں ، ہمت کہاں ، نُدرت کہاں ، مدحت کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ