اردوئے معلیٰ

Search

بے سہارا ہیں ترے در پہ آئے بیٹھے ہیں

تیرے دربار میں دامن بچھائے بیٹھے ہیں

 

بُتان نخوت و پندار سے ملے گی نجات

سو اپنے قلب کو کعبہ بنائے بیٹھے ہیں

 

حضور! بھیجا ہے اللہ نے ترے در پر

کہ اپنی جان پہ ہم ظلم ڈھائے بیٹھے ہیں

 

اپنے دامان میں اور کچھ نہیں ہے آقا!

چار چھ اشکِ ندامت بہائے بیٹھے ہیں

 

کرم ہو ہم پہ حضور! اپنی آل کا صدقہ

انہی کو اپنا وسیلہ بنائے بیٹھے ہیں

 

کبھی تو آئیں گے اپنے غریب خانے پر

ہم اسی آس میں کٹیا سجائے بیٹھے ہیں

 

ہے جن کا نام وسیلہ جلیل محشر میں

انہی کے نام کو دل سے لگائے بیٹھے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ