بے شمار اس پہ انعامِ رحماں ہوا

بے شمار اس پہ انعامِ رحماں ہوا

جو شہِ مرسلیں کا ثناخواں ہوا

 

جب بھی آیا خیالِ درِ مصطفیٰ

حجرۂ فکر جنت بداماں ہوا

 

ذرہ ذرہ نبی کے درِ پاک کا

نازشِ اوجِ برجیس و کیواں ہوا

 

جس گھڑی ان کی چشمِ عنایت ہوئی

مرحلہ جو تھا مشکل وہ آساں ہوا

 

اس کی الفت مرے دل میں ہے جلوہ گر

جو سرِ لامکاں رب کا مہماں ہوا

 

آپ ہی ذاتِ باری کا ہیں آئنہ

آپ کی ذات سے رب کا عرفاں ہوا

 

شاہِ نوّاب کی ہے عنایت مجیبؔ

ذوقِ مدحت ہمیں بھی جو ارزاں ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ