بے وفا سے بھی پیار ہوتا ہے

بے وفا سے بھی پیار ہوتا ہے

یار کچھ بھی ہو یار ہوتا ہے

 

ساتھ اس کے جو ہے رقیب تو کیا

پھول کے ساتھ خار ہوتا ہے

 

جب وہ ہوتے ہیں صحن گلشن میں

موسم نو بہار ہوتا ہے

 

کاش ہوتے ہم اس کے پھولوں میں

اس گلے کا جو ہار ہوتا ہے

 

دوست سے کیوں بھلا نہ کھاتے فریب

دوست پہ اعتبار ہوتا ہے

 

جب وہ آتے نہیں شب وعدہ

موت کا انتظار ہوتا ہے

 

وصل میں بھی خیال ہجر سے دل

بے سکوں بے قرار ہوتا ہے

 

ہم بڑے خوش نصیب ہیں ورنہ

آپ کو کس سے پیار ہوتا ہے

 

تیر وہ تیر نیم کش تو نہیں

دل کے جو آر پار ہوتا ہے

 

حسن اخلاق اے عروس حیات

سب سے اچھا سنگھار ہوتا ہے

 

عشق کی کائنات کا پُرنمؔ

حُسن پروردگار ہوتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ