بے کیف ہے حیات ترے ذکر کے بغیر

بے کیف ہے حیات ترے ذکر کے بغیر

بنتی نہیں ہے بات ترے ذکر کے بغیر

 

بھولیں جو تیرا نام تو بگڑیں تمام کام

ہے زندگی ممات ترے ذکر کے بغیر

 

ہے موت بھی حیات تری یاد کے طفیل

ہے دوپہر بھی رات ترے ذکر کے بغیر

 

ہے روشنیِ دہر بھی تاریک تیرے بِن

کیا نیل کیا فرات ترے ذکر کے بغیر

 

سب تیرے امر کُن کے ہیں محتاج اے خدا

پھیکی ہر اک بات ترے ذکر کے بغیر

 

تُو خالقِ قمر ہے تُو ہی خالقِ شکر

کیا بھائیں عطریات ترے ذکر کے بغیر

 

مشک و گلاب و عود کی خوشبو بجا مگر

کیا مصر کیا سوات ترے ذکر کے بغیر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں تیرا فقیر ملنگ خدا
تیرا ہی ہرطرف یہ تماشا ہے اے کریم
حمد و ثنا سے بھی کہیں اعلیٰ ہے تیری ذات
دردِ دل کر مجھے عطا یا رب
شعور و آگہی، فکر و نظر دے
خدا اعلیٰ و ارفع، برگزیدہ
خدا مجھ کو شعورِ زندگی دے
میں بے نام و نشاں سا اور تو عظمت نشاں مولا
خدا ہی بے گماں خالق ہے سب کا
خدا آفاق کی روحِ رواں ہے

اشتہارات