اردوئے معلیٰ

Search
سرکار کے دو مبارک اسماء ” آمِر(حکم دینے والا) ” اور "نَاہی(منع فرمانے والا)” کو ایک ساتھ بطور ردیف صنعتِ مستزاد میں نعت :

 

تابع ہے تِرا رستۂِ فردوس کا راہی ، اے آمِر و ناہی !

مُنکِر ہے تِرے حُکم کا مَحصورِ تباہی ،اے آمِر و ناہی !

 

ہے ہاتھ تِرا دستِ خدا ، اور تِرا کام ، اللّٰہ کا ہوا کام

اور قول ہے مِن جُملۂِ اَقوالِ الٰہی ، اے آمِر و ناہی !

 

معراجِ تَخَیُّل تِرے قدمین کی یادیں ، نعلین کی باتیں

دَستارِ تَکَلّم ہے ترا حرفِ ثنا ہی ،اے آمِر و ناہی !

 

ضَو دِن نے تِرے چہرۂِ وَالشمس سے پائی ،اے نورِ خدائی !

لِی گیسوئے وَاللیل سے راتوں نے سیاہی، اے آمِر و ناہی !

 

حرفوں کا بیاباں ہے گُلِ نعت سے گلشن ،اور کِھلتا ہوا فن !

ورنہ تو مہکتی نہ یوں گفتار کَمَا ھِی ، اے آمِر و ناہی !

 

ہے شرع سے ثابت کہ تُو تَکویں میں ہے مُختار،اے نائِبِ غَفّار !

اور صاحبِ تَحکیمِ مُباحات و مَناہی، اے آمِر و ناہی !

 

ما قبل نبی اس لیے آئے تھے مُقَدَّم اور تُو ہوا خاتَم

تُو صاحبِ دیدار ، وہ اَصحابِ گواہی ،اے آمِر و ناہی !

 

دیکھیں گے تِرے مَوقفِ محمود کی رِفعت،اور اوجِ شفاعت

مانیں گے تجھے حشر میں سب خواہی نخواہی ،اے آمِر و ناہی !

 

تُو مُثبِتِ حَسنات ہے ، مِعمارِ مَعابِد ،اے جانِ مقاصِد !

تو نافیِٔ آلاتِ خرافات و مَلاہی، اے آمِر و ناہی !

 

کِیں ہم نے جو ہر لمحہ خطاؤں پہ خطائیں ،بنتی تھیں سزائیں

تو نے ہے مگر ہم سے بَہ اِنعام نباہی، اے آمِر و ناہی !

 

قربان تِری مُنکَسِری پر ہوئی خلقت ، ہوتے ہوئے قدرت

تو نے ہے چُنا فَقر کو ، ٹُھکرائی ہے شاہی، اے آمِر و ناہی !

 

کیا خوب تِرا حسن ہے اے جلوۂ وحدت ،خَلقت تو ہے خلقت

تجھ سے تو مُلاقات ہے خود رب نے بھی چاہی، اے آمِر و ناہی !

 

دشمن کو بھی دیوانہ کرے تیرا تبسُّم ،اور حُسنِ تَکَلّم

خالِق نے تِری خوبیِٔ اَخلاق سَراہی، اے آمِر و ناہی !

 

اے مالکِ فردوس ! یہ تیرا ہی کرم ہے ،اتنا تو بھرم ہے

گو لائقِ دوزخ ہوں مگر ہوں تو تِرا ہی، اے آمِر و ناہی !

 

مَبعوث ہوا بن کے مُعَلِّم تو جہاں کا ،مرکز ہے اَماں کا

سیرت ہے فقط تیری فلاحی و رِفاہی، اے آمِر و ناہی

 

کیوں خوف رکھے سازشِ اَعدا سے، بلا سے،جب فضلِ خدا سے

حاصل ہے معظمؔ کو تری پُشت پناہی، اے آمِر و ناہی !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ