اردوئے معلیٰ

Search

تاثیرِ فیضِ خاکِ درِ بارگاہِ عشق

ماشاءاللہ ہوتا رہا گاہے گاہے عشق

 

میرے مکان پر یہ لکھا ہے کہ "​آئیے

یہ ہے جہاں میں آخری آرام گاہِ عشق”​

 

پھر سب نے یک زبان کہا "​عشق زندہ باد”​

نعروں سے گونجتی ہی رہی جلسہ گاہِ عشق

 

راز ونیاز کتنے ہوئے مجھ سے یہ نہ پوچھ

آباد ساری رات رہی خیمہ گاہِ عشق

 

میری گلی میں عشق نے بچپن گزارا ہے

تب سے ہی میرے پیچھے لگی ہے نگاہِ عشق

 

میں نے جہاں پڑھا، وہیں اُستاد لگ گیا

ضامِن ہے تربیت کی مِری درسگاہِ عشق

 

اے میرے کِردگار! گھڑی روک، دو گھڑی

پھیلا ہوا ہے حُسن تا حدِ نگاہِ عشق

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ