اردوئے معلیٰ

Search

تاجدارِ حرم اے شہِ انس و جاں شاہِ کون و مکاں

اے حبیبِ خدا آپ جیسا کہاں شاہِ کون ومکاں

 

بزمِ کونین کی ساری ہی رونقیں اور سبھی برکتیں

آپ ہی کے سبب سرورِ سروراں شاہِ کون و مکاں

 

طُور پر ہے کوئی تو کوئی چرخ پر شان ہے اوج پر

فضلِ ربُّ العلیٰ سے گئے لامکاں شاہِ کون و مکاں

 

انتخاب آپ کی ذات کا ہوگیا نام ہے مصطفیٰ

بات وحئ خدا کُن کی کُنجی زباں شاہِ کون و مکاں

 

جب کہ جلوہ گری آپ کی ہوگئی مِل گئی ہر خوشی

جن وانس و ملک تھے سبھی شادماں شاہِ کون و مکاں

 

رنج و غم کی دوا نام ہے آپ کا مرحبا مرحبا

آپ کا ذکر ہے وجہِ تسکینِ جاں شاہِ کون و مکاں

 

ہر خفی و جلی عِلم و عرفاں دیا اور پھر کر دیا

حق تعالیٰ نے ہر غیب تجھ پر عیاں شاہِ کون و مکاں

 

معجزہ خوب ہے واہ کیا جُود ہے سیر سب ہو گئے

ایسے چشمے ہُوئے اُنگلیوں سے رواں شاہِ کون و مکاں

 

نام لیوا ہے جو میرے سرکار کا ہے جو اُن کا گدا

اُس پہ رحمت کا فرمائیں گے سائباں شاہِ کون و مکاں

 

بات بِگڑی ہُوئی تیری بن جائے گی خوف مرزا نہ کر

میرے سرکار ہیں شافعِ عاصیاں شاہِ کون و مکاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ