تاجدار جہاں یا نبی محترم (درود و سلام)

تاجدار جہاں یا نبی محترم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

ہم غلاموں پہ ہو آقا نظر کرم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

آپ کی ہے زمیں آسماں آپ کا

عرش سے فرش تک کل جہاں آپ کا

آپ کی ملک ہے آقا عرب و عجم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

یہ زمیں آسماں یہ جہاں کا نظام

آپ کے واسطے ہیں یہ محفل تمام

تم نہ ہوتے تو ہو جاتا سارا ختم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

آپ صادق امیں سیدالمرسلین

خاتم الانبیاء رحمت عالمین

آپ کی شان کا سب سے اونچا علم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

حسن یوسف پہ بیشک کٹی انگلیاں

پر تیرے نام پر اے شہہ دوجہاں

تیرے مستانوں نے کر دیئے سر قلم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

یہ بہاریں نظارے یہ گلشن کے پھول

وجہہء تخلیق کل میرا پیارا رسول

کل جہاں کی صداء نغمہ سنج ہے ارم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

سنگ کلمہ پڑھے پیڑ سجدے کریں

چاند شق ہوگیا ڈوبا سورج پھریں

زیر پاء آپ کے ہوتے پتھر نرم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

زلفیں واللیل رخ والضحیٰ ہے تیرا

رب کے محبوب تو دل رباء ہے میرا

کوئی تجھ سا نہیں ہے خدا کی قسم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

حوروں غلماں کی ہم کو نہ جنت کی چاہ

آپ کی دید کو آقا ترسے نگاہ

جلوہ دکھلایئے جلد شاہِ امم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

جام الفت کا اپنی پلا دیجئے

اپنا دیوانہ ہم کو بنا دیجیئے

عشق میں آپ کے ہی یہ نکل جائے دم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

خالی دامن کو الفت سے بھر دیجئے

ساتھ ہی شوق سنت عطاء کیجئیے

بھیک مانگے یہی ہاتھ پھیلا کے ہم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

موت دیدار کا ان کے پیغام ہے

کتنا پیارا یہ دیوانوں انعام ہے

یا نبی یا نبی کہہ کے مرجائیں ہم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

صدقہ حسنین کا یا شفیع الامم

واسطہ چار یاروں کا کردو کرم

دور ہوجائے سارے مسلماں کے غم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

ہم گنہگار ہیں ہم سیہ کار ہیں

اپنے اعمال سے ہم شرمسار ہے

لاج رکھ لینا محشر میں شاہِ امم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

یہ درودوں سلام کیجئے آقا قبول

معاف کر دیجئے ہم کو پیارے رسول

چھوڑ کر در تمہارا کہاں جائیں ہم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

اپنی شایان شاں لطف فرمایئے

اپنے خالد کو قدموں میں بلوائیے

پاس دولت ہے اسکے نہ جاہ و حشم

تم پہ ہردم کروڑوں درود و سلام

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

دربار رسالت كی كیسی وہ گھڑی ہوگی
چشمِ بے چین کا چین ‘ دل کا سکوں ‘ روحِ انساں کی لذّت مدینے میں ہے
ذکر سرکار، دو عالم سے سوا رکھا ہے
کرم کے راز کو علم و خبر میں رکھتے ہیں
مکاں ہے نور سے معمور لامکاں روشن
مجھ پر میرے مولا کی ہے رحمت کی برسات
حسن قدرت میں جہاں مجھ سے سجانے والا
مجرمِ ہیبت زدہ جب فردِ عصیاں لے چلا
خوشبوئے دشتِ طیبہ سے بس جائے گر دماغ
اللہ اللہ شہِ کونین جلالت تیری

اشتہارات