اردوئے معلیٰ

Search

تاریک دلِ زار ہے ، صد رشکِ قمر کر

اے مہرِ کرم میری شبِ غم کو سحر کر

 

اے بحرِ عطا ! مخزنِ اَصداف و جواہر !

میں قطرۂِ بے مایہ ہوں ، تابندہ گہر کر !

 

انگشت کا اعجاز نمایاں ہو دوبارہ

دل چیر کے عاشق کا عیاں شقِّ قمر کر

 

تمدیح کو حرفوں کے ستارے ہوں میسر

افلاکِ تکلم پہ مجھے ماہِ ہنر کر

 

بانوئے سخن چاہتی ہے بننا سنورنا

اے آئنۂِ مدحتِ شہ ! رُخ کو اِدھر کر

 

اے جانِ تمنا ! مری بر آئیں مرادیں

اے کانِ عنایات ! دعاؤں کو اثر کر

 

حاتم کا نہیں در یہ در شاہ معظمؔ

کہنا نہیں پڑتا کہ کرم بارِ دگر کر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ