اردوئے معلیٰ

تج کے بے روح مشاغل اے دل

تج کے بے روح مشاغل اے دل

چھیڑ حضرت کے شمائل اے دل

 

مگر اتنا تجھے احساس رہے

سخت مشکل ہے یہ منزل اے دل

 

نارسا فکرِ سخنور ہے یہاں

وہ تو ہیں‌ خلق کا حاصل اے دل

 

بے شمار ان کی عنایات اے جاں

بے کراں ان کے فضائل اے دل

 

نہ کوئی ان کا محاسن میں‌ شریک

نہ کوئی ان کا مماثل اے دل

 

نامِ پاک ان کا ہے طغرائے نجات

ان پہ قرآں ہوا نازل اے دل

 

وہی پیغام برِ فطرت ہیں

کائنات ان کی ہے قائل اے دل

 

پیروی ان کی جو لازم ٹھہرے

حل ہوں انساں کے مسائل اے دل

 

ان کا آئین محبت ہو عام

نہ رہے کوئی بھی مشکل اے دل

 

ضبط جذبات یہاں لازم ہے

ان کا دربار ہے اے دل اے دل

 

کرمِ سرورِ دیں چارہ غم

یہ تلاطم ہے وہ ساحل اے دل

 

کسبِ نور آپ سے تو بھی کر لے

اور ہو جا مہِ کامل اے دل

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ