ترا تذکرہ مری بندگی ترا نامِ نامی قرارِ جاں

ترا تذکرہ مری بندگی ترا نامِ نامی قرارِ جاں

اے حبیبِ رب اے شہِ عرب ترا پیار ہے میرا آسماں

 

تری ذاتِ پاک کے فیض سے سبھی کائنات میں رنگ ہے

تری شان زینتِ زندگی تیرا ذکر رونقِ دو جہاں

 

مرے دل میں ایک خدا رہا تو ملا تو کفر ہوا ہوا

تری ذاتِ پاک کے معجزے میں کہاں کہاں نہ کروں بیاں

 

کڑی دھوپ کا یہ کٹھن سفر مجھے جاں و دل سے عزیز تر

تری یاد جس میں ہے ہم سفر ترا ذکر جس میں ہے سائباں

 

جو ملا وہ تیرے سبب ملا، جسے تو ملا اسے رب ملا

سبھی فیصلوں پہ تو مہر ہے ترے در کے بعد ہے در کہاں

 

مرا دل دلوں کا ہے بادشہ کہ ملی اسے دولتِ ثنا

وہ نصیب کا ہے غریب دل تیری یاد جس میں نہیں نہاں

 

تیری نعت پاک کے پھول جو مری چشمِ تر سے ہیں شبنمی

یہ ترے ہی پیار کے رنگ ہیں مری آس، مان کے ترجماں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سنا ہے شب میں فرشتے اُتر کے دیکھتے ہیں
ایسا تجھے خالق نے طرح دار بنایا
رحمت نہ کس طرح ہو گنہگار کی طرف
حضورِ کعبہ حاضر ہیں حرم کی خاک پر سر ہے
مرے آقاؐ، کرم مُجھ پر خُدارا
آپؐ کے پیار کے سہارے چلوں
نبیؐ کا گُلستاں ہے اور میں ہوں
ذکرِ نبیؐ سے ہر گھڑی معمُور ہوتا ہے
نہیں بیاں کی ضرورت، حضور جانتے ہیں
کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا

اشتہارات