اردوئے معلیٰ

Search

ترِے شہرِ مقدّس پر تری رحمت کے سائے ہیں

اسی امید پر آقا! تری چوکھٹ پہ آئے ہیں

 

مری بخشش کی کچھ صورت نکل آئے گی اس در پر

گناہوں سے بھری گٹھڑی تبھی تو باندھ لائے ہیں

 

یہ بخشش ہے نصیب اس کا ترِے در پر جو آ پہنچا

کہ جس کے واسطے توُ نے یدِ رحمت اٹھائے ہیں

 

مرے دکھ کا مداوا تو ترے بن ہو نہیں سکتا

کہ میری روح نے فرقت میں صدہا زخم کھائے ہیں

 

لحد میں جب پریشاں تھا مرِے آقا تو پھر اس دم

ترِے در کی غلامی کے وہ لمحے کام آئے ہیں

 

لحد میں جن غلاموں نے مرے آقا کو پہچانا

تو چہرے ان غلاموں کے خوشی سے تمتمائے ہیں

 

اس اُمّت پر کرم کیجے ،بڑی مشکل میں ہے اس دم

غم و اندوہ کے بادل ہمارے سر پہ چھائے ہیں

 

محافل تیری یادوں کی جہاں سجتی رہیں آقا!

تو گھر ان خوش نصیبوں کے ہمیشہ جگمگائے ہیں

 

جلیلِ بے نوا پر بھی حضور اپنا کرم کر دیں

کہ اس مشکل میں اس کے تو سبھی اپنے، پرائے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ