اردوئے معلیٰ

Search

تری ذاتِ حق جلوہ گر سُو بہ سُو ہے

جِدھر دیکھتا ہوں اُدھر تو ہی تُو ہے

 

مچلتی دلوں میں تری آرزُو ہے

جسے دیکھوں اس کو تری جُستجو ہے

 

صبا کے لبوں پر تری گفتگو ہے

مہکتی چمن در چمن مُشکبو ہے

 

تو رازق ہے مخلوقِ خورد و کلاں کا

ترے ہی کرم سے سبھی کی نُمو ہے

 

سمندر کی لہروں میں تجھ سے روانی

رواں منزلوں کو ہر اک آب جُو ہے

 

مہ و مہر و اختر یہ سب نور پارے

تری قدرتوں سے ہر اک خوب رُو ہے

 

ہوائیں بھی گائیں ترے گیت مولا

ترا نام لیتی یہ کوئل کی کُو ہے

 

زمان و مکاں میں عیاں بھی نہاں بھی

تری داستاں ہی چھڑی کُو بَہ کُو ہے

 

کلیسا کنیسہ یا دیر و حرم ہو

بشر کی ضرورت تری جُستجو ہے

 

کوئی بے نیازی سے تیری ہے سرکش

ندامت کے اشکوں سے اک با وضُو ہے

 

رہے عمر بھر وقفِ تحمید و تمدیح

ظفر کی خدایا یہی آرزُو ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ