اردوئے معلیٰ

Search

تری نظر نے مرے قلب و جاں کے موسم میں

یقیں کے رنگ بھرے ہیں گماں کے موسم میں

 

زکوٰۃِ درد ہے واجب متاعِ الفت پر

حسابِ غم کرو سود و زیاں کے موسم میں

 

نہ اب تلاشِ بہاراں، نہ ڈر خزاؤں کا

ٹھہر گیا ہے چمن درمیاں کے موسم میں

 

وہ انتظار کا موسم بہت غنیمت تھا

بڑھی ہے تشنگی ابرِ رواں کے موسم میں

 

حلیف سب تہی دامانِ جستجو نکلے

اکیلے ہم چلے کارِ گراں کے موسم میں

 

مرے وطن میں پنپتا نہیں گلِ امید

کوئی تو بات ہے آخر یہاں کے موسم میں

 

ہنر نصیب خدا رکھے دست ہجرت کو

کہاں کے پھول کھلائے کہاں کے موسم میں

 

سخن ظہیرؔ بناؤ خیال پنہاں کو

خموشی جرم ہے لفظ و بیاں کے موسم میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ