اردوئے معلیٰ

تری نگاہ سے ذرے بھی مہر و ماہ بنے

گدائے بے سروساماں جہاں پناہ بنے​

 

رہ مدینہ میں‌قدسی بھی ہیں جبیں فرسا

یہ آرزو ہے مری جاں بھی خاکِ راہ بنے​

 

زمانہ وجد کُناں اب بھی اُن کے طوف میں ہے

جو کوہ و دشت کبھی تیری جلوہ گاہ بنے​

 

حضور ہی کے کرم نے مجھے تسلی دی

حضور ہی مرے غم میں مری پناہ بنے​

 

ترا غریب بھی شایانِ یک نوازش ہو

ترا فقیر بھی اک روز کجکلاہ بنے​

 

جہاں جہاں سے وہ گذرے ، جہاں جہاں ٹھہرے

وہی مقام محبت کی جلوہ گاہ بنے​

 

کریم! یہ بھی تری شانِ دلنوازی ہے

کہ ہجر میں مرے جذبات اشک و آہ بنے​

 

وہ حسن دے جو تری طلعتوں کا مظہر ہو

وہ نور دے جو فروغِ دل و نگاہ بنے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات