تری نگاہ سے ذرے بھی مہر و ماہ بنے

تری نگاہ سے ذرے بھی مہر و ماہ بنے

گدائے بے سروساماں جہاں پناہ بنے​

 

رہ مدینہ میں‌قدسی بھی ہیں جبیں فرسا

یہ آرزو ہے مری جاں بھی خاکِ راہ بنے​

 

زمانہ وجد کُناں اب بھی اُن کے طوف میں ہے

جو کوہ و دشت کبھی تیری جلوہ گاہ بنے​

 

حضور ہی کے کرم نے مجھے تسلی دی

حضور ہی مرے غم میں مری پناہ بنے​

 

ترا غریب بھی شایانِ یک نوازش ہو

ترا فقیر بھی اک روز کجکلاہ بنے​

 

جہاں جہاں سے وہ گذرے ، جہاں جہاں ٹھہرے

وہی مقام محبت کی جلوہ گاہ بنے​

 

کریم! یہ بھی تری شانِ دلنوازی ہے

کہ ہجر میں مرے جذبات اشک و آہ بنے​

 

وہ حسن دے جو تری طلعتوں کا مظہر ہو

وہ نور دے جو فروغِ دل و نگاہ بنے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

یا محمد محمد میں کہتا رہا نور کے موتیوں کی لڑی بن گئی
خدا کے واسطے لے چل صبا مدینے میں
پھر کرم ہوگیا میں مدینے چلا
معطّر شُد دل از بوئے محمّد
دلدار بڑے آئے محبوب بڑے دیکھے
خالق کے شاہکار ہیں خلقت کے تاجدار
خوشبو اُتر رہی ہے مرے جسم وجان میں
بسائیں چل کے نگاہوں میں اُس دیار کی ریت
دونوں جہاں میں حسن سراپا ہیں آپ ہی
ذات عالی صفات کے صدقے

اشتہارات