ترے ذکرسے چِھڑ گئی بات کیا کیا

ترے ذکرسے چِھڑ گئی بات کیا کیا

فسانے سُنے ہم نے کل رات کیا کیا

 

تُو رونے لگے گا اگر میں بتا دوں

کہ ہنس ہنس کے جھیلے ہیں صدمات کیا کیا

 

وضو، قرأتِ آیت عشق ، گریہ

تری دید کی ہیں رسومات کیا کیا

 

کبھی چال بدلی ، کبھی راہ بدلی

کیے ہیں ترے پاؤں نے ہاتھ کیا کیا

 

میں جسموں کے جنگل سے گُزرا تھا اک دن

کِھلے تھے درختوں پہ گُل پات کیا کیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ