اردوئے معلیٰ

Search

تمنا ، آرزو حسرت مرے سینے میں رہتی ہے

کروں جب آپ کی باتیں نمی آنکھوں میں رہتی ہے

 

مواجہ کی حدوں میں ہوں کہ ہوں طیبہ کی گلیوں میں

سلام اپنے لبوں پر بندگی آنکھوں میں رہتی ہے

 

نبی کے در سے واپس آ کے ایسا حال ہے اپنا

کوئی بستی ہو طیبہ کی گلی آنکھوں میں رہتی ہے

 

کسی کے کام آؤں جب کبھی انصار کی صورت

سکوں ملتا ہے دل کو اور خوشی آنکھوں میں رہتی ہے

 

روانہ کرتے ہیں سوے مدینہ جب کسی کو ہم

کرے دل رشک اس پر بے بسی آنکھوں میں رہتی ہے

 

در اقدس پہ پہلی بار جب حاضر ہوا تھا میں

برس بیتے ابھی تک وہ گھڑی آنکھوں میں رہتی ہے

 

کبھی طائف ، کبھی خندق ، کبھی کفار کی یورش

مصیبت میں تسلی کو مری آنکھوں میں رہتی ہے

 

حفاظت دین کی کفار میں گھر کر بھی کرتا ہوں

کہ ایسے وقت تصویرِ علی آنکھوں میں رہتی ہے

 

عبادت کے وہ دن حرمین میں جتنے بھی گذرے تھے

وہ دن جب یاد آئیں بے کلی آنکھوں میں رہتی ہے

 

ظہیرؔ اب بھی کہیں فاروق مل جائیں تو پہروں تک

سفر کی داستاں لب پر نمی آنکھوں میں رہتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ