تمہیں خبر بھی ھے جو مرتبہ حُسین کا ھے ؟

تمہیں خبر بھی ھے جو مرتبہ حُسین کا ھے ؟

فُرات چھیننے والو ! خُدا حُسَین کا ھے

 

کوئی سدا نہیں روتا بچھڑنے والوں کو

ثباتِ رسمِ عزا مُعجزہ حُسَین کا ھے

 

ازل سے تا بہ ابد نُور کے نشاں دو ھیں

اک آفتاب ھے، اک نقشِ پا حُسَین کا ھے

 

جہاں بھی ذکر ھو، اشکوں کے گُل برستے ھیں

یہ احترام نبی کا ھے یا حُسَین کا ھے

 

ذراسا غور سے دیکھو اُفق کی سُرخی کو

فلک پہ خوں سے رقم سانحہ حُسَین کا ھے

 

مرے لبوں پہ بھلا خوفِ تشنگی کیوں ھو ؟

مرے لبوں پہ تو نعرہ ھی "یاحُسَین” کا ھے

 

ستارۂ سحری جس کو لوگ کہتے ھیں

فرازِ عرش پہ روشن دیا حُسَین کا ھے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جب لعینوں کے مقابل علی اکبرؑ نکلے
جو زندگی میں کہیں سخت موڑ آتے ہیں
اس ادا سے تاجدار کربلا سجدے میں ہے
عظیم فردِ پنج تن حسن حسن
عید پھیکی لگ رھی ھے، عشق کی تاثیر بھیج
عشق سچا ھے تو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں
لندن کے سفر سے واپسی پر
نقش و نمود و نام کو اللہ پہ چھوڑ دے
چمکتے ستارے! اگر میں تری طرح لافانی ہوتا
روتا ہوں تری کھوئی ہوئی یاد کے دُکھ میں

اشتہارات