اردوئے معلیٰ

تُم ہو معراجِ وفا ، اے کشتگانِ کربلا

ورنہ آساں تو نہیں تھا امتحانِ کربلا

 

ہر کہانی جس نے لکھی ہے ازل سے آج تک

وہ بھی رویا ہو گا سُن کر داستانِ کربلا

 

دودھ کی نہریں بھی قُرباں ، حوضِ کوثر بھی نثار

اِک تمہاری پیاس پر ، اے تشنگانِ کربلا

 

کتنا خوش قسمت ہے میرا دل بھی ، میری آںکھ بھی

یہ ثنا خوانِ نبی ، وہ سوز خوانِ کربلا

 

بے کسی کی لاج رکھ لی اور فارس ہو گئے

چارۂ بے چارگاں ، بے چارگانِ کربلا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات