تُوعنایتوں کا مجاز ہے، مری خواہشیں مرے نام کر

تُوعنایتوں کا مجاز ہے، مری خواہشیں مرے نام کر

مری راحتوں کو عروج دے، مری دھڑکنوں میں قیام کر

 

مرا ہجر زاد نصیب ہے تری طلعتوں کے گمان تک

کسی خوابِ شوق میں آ ذرا، کسی رتجگے سے کلام کر

 

پسِ حرفِ عجز ہیں منتظر، مری جان و جسم کے سلسلے

مری حسرتوں کی زمین پر مری حیرتوں میں خرام کر

 

اِسی ایک کیف سے جوڑ دے،مرے روز و شب کی حلاوتیں

مری صبح، صبحِ درود ہو، مری شام، شامِ سلام کر

 

مری حرف گاہِ نیاز کے سبھی اہتمام ہیں مضمحل

مری بات صیغۂ خام ہے، اسے تام کر، اسے عام کر

 

سبھی قافلے ہیں رواں دواں سوئے شہرِ ناز، بس ایک مَیں

سرِ رہگزارِ خیال پر تری یاد بیٹھا ہوں تھام کر

 

مری مدحتوں کی نیاز پر، مری نسبتوں کے جواز پر

مَیں غُلام ابنِ غُلام ہوں، مری نسل نسل غُلام کر

 

مجھے حاضری سے نہال کر، مجھے باریابی میں ڈھال دے

مرے بے نمود نصیب کو کبھی رشکِ ماہِ تمام کر

 

تری دسترس میں ہیں یا نبی ! مری قُربتیں، مرے فاصلے

تُو خیالِ شوق کی اوٹ سے رُخِ دید بر لبِ بام کر

 

ترے اذن پر ہے مدارِ کُل، یہ اثاثہ کیا، یہ بُلاوا کیا

تُو سحر کو دستِ مُراد دے، تُو صبا کو وقفِ پیام کر

 

کفِ عرضِ حال ہے منفعل، لبِ تابِ شوق ہے مضمحل

جو اُجال لاتی ہے خواب کو، اُسی اَن کہی کو مدام کر

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

اُنؐ کے رستوں کی گردِ سفر مانگنا
مری اوقات کیا ہے اور کیا میری حقیقت ہے
مری زبان پہ ان کی ہے گفتگو اب تک
سطوتِ شاہی سے بڑھ کر بے نوائی کا شرَف
وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود
میں ، مری آنکھیں ، تمنائے زیارت ، روشنی
نبی اکرمؐ شفیع اعظمؐ دکھے دلوں کا پیام لے لو
آنکھ گنبد پہ جب جمی ہوگی
جب چھڑا تذکرہ میرے سرکار کا میرے دل میں نہاں پھول کھلنے لگے
صبح بھی آپؐ سے شام بھی آپؐ سے