تُو نے مجھ کو حج پہ بُلایا یا اللہ میری جھولی بھردے

تُو نے مجھ کو حج پہ بُلایا یا اللہ میری جھولی بھردے

گِرد کعبہ خوب پھرایا یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

میدانِ عرفات دکھا یا یا اللہ مِری جھولی بھر دے

بخش دے ہر حاجی کو خدایا یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

بہرِ کوثرو بِیرِ زم زم کردے کرم اے ربّ اکرم

حشر کی پیاس سے مجھ کو بچانا یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

مولیٰ مجھ کو نیک بنادے اپنی الفت دل میں بسا دے

بہرِ صفا اور بہرِ مروہ یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

یا اللہ یا رحمٰن یا حنّان یا منّانُ

بخش دے بخشے ہوؤں کا صدقہ یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

واسطہ نبیوں کے سَرور کا واسِطہ صِدّیق اور عُمر کا

واسِطہ عثمان و حیدر کا یا اللہ مِری جھولی بھر دے

 

نارِ جہنّم سے تُو بچانا خُلدِ بریں میں مجھ کو بسانا

یاربّ اَز پئے ابو حنیفہ یا اللہ مِری جھولی

 

سائل ہوں میں تیری وِلا کا پھیر دے رُخ ہر رنج وبلا کا

واسطہ شاہِ کرب و بلا کا یا اللہ مِری جھولی

 

جنّت میں آقا کا پڑوسی بن جائے عطّار الٰہی

بَہرِ رضا و قُطبِ مدینہ یا اللہ مِری جھولی بھردے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ہر جگہ ہر نظر دیکھ سکتی نہیں ، تو حیات آفریں تو حیات آفریں
بے کیف ہے حیات ترے ذکر کے بغیر
اپنی مخلوق پر نظر مولا!!
اک بھٹکتا سا مسافر ترے در پر آیا
خدا فرمانروا، حاجت روا ہے، خدا اکبر ہے اعظم ہے بڑا ہے
خدا موجود ہے عرشِ بریں پر
ہمیں دے یا خُدا نُورِ بصیرت بھی بصارت بھی
مسلمانوں کا مرکز گھر خدا کا
زمانہ جس کو خالق مانتا ہے
سدا وردِ زباں اللہ اکبر