اردوئے معلیٰ

Search

ثناۓ خواجہ مرے ذہن کوئی مضموں سوچ

جناب وادیٔ حیرت میں گم ہوں کیا سوچوں

 

زبان مرحلۂ مدح پیش ہے کچھ بول

مجال حرف زدن ہی نہیں ہے کیا بولوں

 

قلم بیاض عقیدت میں کوئی مصرع لکھ

بجا کہا سر تسلیم خم ہے کیا لکھوں

 

شعور ان کے مقام پیمبری کو سمجھ

میں قید حد میں ہوں وہ بے کراں میں کیا سمجھوں

 

خرد بقدر رسائی تو ان کے علم کو جان

میں نارسائی کا نقطہ ہوں ان کو کیا جانوں

 

خیال گنبد خضرا کی سمت اڑ پر کھول

یہ میں ہوں اور یہ مرے بال و پر ہیں کیا کھولوں

 

طلب مدینے چلیں نیکیوں کے دفتر باندھ

یہاں یہ رخت سفر ہی نہیں ہے کیا باندھوں

 

نگاہ دیکھ کہ ہے روبرو دیار جمال

ہے ذرہ ذرہ یہاں آفتاب کیا دیکھوں

 

دل ان سے حرف دعا شیوۂ تمنا مانگ

بلا سوال وہ دامن بھریں تو کیا مانگوں

 

حضور عجز بیاں کو بیاں سمجھ لیجئے

تہی ہے دامن فن آستاں پہ کیا لاؤں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ