’’ثنا منظوٗر ہے اُن کی نہیں یہ مدعا نوریؔ ‘‘

 

’’ثنا منظوٗر ہے اُن کی نہیں یہ مدعا نوریؔ ‘‘

نبی کے عشق و الفت کے ہو تم اک رہِ نما نوریؔ

کہ باغِ نعت کے اک بلبلِ شیریں بیاں تم ہو

’’سخن سنج و سخن ور ہو سخن کے نکتہ داں تم ہو‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ