جانِ گلزارِ مصطفائی تم ہو

جانِ گلزارِ مصطفائی تم ہو

مختار ہو مالکِ خدائی تم ہو

جلوہ سے تمہارے ہے عیاں شانِ خدا

آئینۂ ذاتِ کبریائی تم ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

کی محمدؐ سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں
لاکھوں درود اس ذات پہ نائم جس نے ہمیں قرآن دیا
جو لوگ خدا کی ہیں عبادت کرتے
مرے دل کی صدا، حبیبِ خداؐ
صاحبِ حُسن و جمال آیا ہوں
حبیبِ کبریا بن کر شہِ ارض و سما آئے
سرِافلاک تھی سرکارؐ کی جب آمد آمد
یہ محبوبِ خداؐ کا آستاں ہے
بھاگ جگے گا ہم بھی مدینے جائیں گے ان شاءاللہ
’’شرک ٹھہرے جس میں تعظیمِ حبیب‘‘

اشتہارات