اردوئے معلیٰ

Search

جب بھی درِ رسول پہ جا کر کھڑا ہوا

جاتے ہی مجھ کو رتبۂ زائر عطا ہوا

 

جس کے لبوں پہ رہتا ہے قندِ درودِ پاک

اُس شخص کا ہے شہد میں لہجہ گُھلا ہوا

 

صد شکر ہے کہ میں بھی کھڑا ہوں اُسی جگہ

جس جا ہے قدسیان کا تانتا بندھا ہوا

 

ہو کر درِ علی سے جو پہنچا نبی کے در

در علم و آگہی کا اُسی پر ہی وا ہوا

 

آئے نہ میرا وقتِ اجل حاضری سے قبل

بس ہر گھڑی ہے مجھ کو یہ دھڑکا لگا ہوا

 

کامل یقیں ہے ہوگا تناور درخت بھی

عشقِ نبی کا دل میں ہے پودا لگا ہوا

 

ملتی نہیں جہان میں اُس کو کہیں پناہ

کوئے رسولِ پاک سے ہے جو پھرا ہوا

 

رحمت کی بارشیں ہیں وہاں رات دن جلیل

جس گھر میں ہے درود کا حلقہ سجا ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ