اردوئے معلیٰ

Search

جب بھی نگاہ کی ہے کِسی پر حضور نے

قطرے سے کر دیا ہے سمندر حضور نے

 

نیزے پہ بھی رہا جو بڑی شان سے بلند

چُوما تھا فرطِ نازمیں وہ سَر ، حضور نے

 

اَوجِ کمالِ مہر کہ لحظے میں کر دیا

خدّام کو فلَک کے برابر حضور نے

 

مرجھا گئے تھے ریت پہ جو تشنگی میں پُھول

اُن کو دیا ہے ساغرِ کوثر حضور نے

 

تاحشر ، ہیں تو حاصلِ حسنِ جہاں ہیں وہ

دیکھے ہیں ایک بار جو منظر حضور نے

 

بوسے ازل سے لیتی رہی اِس کے چاندنی

آنا تھا آسماں سے زمیں پَر ، حضور نے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ