اردوئے معلیٰ

Search

جب حِرا کا پیامِ ہُدٰی نُور ہے

پھر سراسر وہ غارِ حِرا نُور ہے

 

وہ جہاں سے بھی گزریں وہیں روشنی

ہر قدم آپ کا مرحبا ! نُور ہے

 

نورِ عالم کا قعدہ رکوع و سجود

’’میرے آقا کی ہر اِک ادا نُور ہے‘‘

 

پل میں کایا پلٹ دے نظر آپ کی

چہرۂ والضّحٰی بانٹتا نُور ہے

 

نُورِ اوّل خُدا نے بنایا اُنہیں

ہیں وہ نُورِ ازل ، ابتدا نُور ہے

 

قدسیوں کا بھی ہے آنا جانا جہاں

ان کی چوکھٹ پہ صُبح و مَسا نُور ہے

 

ہے جہاں شاہِ کونین کا آستاں

اُس نگر کی تو ساری فضا نُور ہے

 

تیری ذاتِ عُلٰی شان تیری جدا

تیرا خُلقِ حَسَن بھی شہا ! نُور ہے

 

ہے جلیل اس کا عکسِ عیاں چاند میں

جس کو ذاتِ احد نے کہا نُور ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ