جب خزاں آئے تو پتّے نہ ثَمَر بچتا ھے

جب خزاں آئے تو پتّے نہ ثَمَر بچتا ھے

خالی جھولی لیے ویران شجَر بچتا ھے

 

نُکتہ چِیں ! شوق سے دن رات مِرے عَیب نکال

کیونکہ جب عَیب نکل جائیں، ھُنَر بچتا ھے

 

سارے ڈر بس اِسی ڈر سے ھیں کہ کھو جائے نہ یار

یار کھو جائے تو پھر کونسا ڈر بچتا ھے

 

روز پتھراؤ بہت کرتے ھیں دُنیا والے

روز مَر مَر کے مِرا خواب نگر بچتا ھے

 

غم وہ رستہ ھے کہ شب بھر اِسے طَے کرنے کے بعد

صُبحدم دیکھیں تو اُتنا ھی سفر بچتا ھے

 

بس یہی سوچ کے آیا ھُوں تری چوکھٹ پر

دربدر ھونے کے بعد اک یہی در بچتا ھے

 

اب مرے عیب زدہ شہر کے شر سے، صاحب

شاذ و نادر ھی کوئی اھلِ ھُنر بچتا ھے

 

عشق وہ علمِ ریاضی ھے کہ جس میں فارس

دو سے جب ایک نکالیں تو صفَر بچتا ھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

نکالو بزم سے تم حاشیہ نشینوں کو
موسمِ گل کے دور میں نالے یہ تھے ہزار کے
بہ شکلِ دل ہی تمہیں دل کی جستجو کیا ہے
آہ کش ہوں نہ لب کشائی ہے
ائے بدرکاب عمر تجھے کیا خبر کہ ہم
چند لمحوں کا ہے زوال مرا
بس ایک جیسے ملے لوگ بار بار مجھے
میں اپنی سمت تمھارے ہی دھیان جیسا ہوں
کہاں سے سیکھ کے آئی ہو تم اداکاری
گئی فصل بہار گلشن سے