جب خزاں آئے تو پتّے نہ ثَمَر بچتا ھے

جب خزاں آئے تو پتّے نہ ثَمَر بچتا ھے

خالی جھولی لیے ویران شجَر بچتا ھے

 

نُکتہ چِیں ! شوق سے دن رات مِرے عَیب نکال

کیونکہ جب عَیب نکل جائیں، ھُنَر بچتا ھے

 

سارے ڈر بس اِسی ڈر سے ھیں کہ کھو جائے نہ یار

یار کھو جائے تو پھر کونسا ڈر بچتا ھے

 

روز پتھراؤ بہت کرتے ھیں دُنیا والے

روز مَر مَر کے مِرا خواب نگر بچتا ھے

 

غم وہ رستہ ھے کہ شب بھر اِسے طَے کرنے کے بعد

صُبحدم دیکھیں تو اُتنا ھی سفر بچتا ھے

 

بس یہی سوچ کے آیا ھُوں تری چوکھٹ پر

دربدر ھونے کے بعد اک یہی در بچتا ھے

 

اب مرے عیب زدہ شہر کے شر سے، صاحب

شاذ و نادر ھی کوئی اھلِ ھُنر بچتا ھے

 

عشق وہ علمِ ریاضی ھے کہ جس میں فارس

دو سے جب ایک نکالیں تو صفَر بچتا ھے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں مر مٹا تو وہ سمجھا یہ انتہا تھی مری
اندھیری رات ، اُداسی ، دُھند ، سردی
عشق میں نے لکھ ڈالا قومیت کے خانے میں
اتنا پڑا ہے جسم پر گردوغبارِ عشق
آرزو موجزن ہے نس نس میں
نہیں مطلب نہیں اس کی نہیں کا
سر بسر آنسو، مکمل غم ھوں میں
ایسی تخیلات میں تجریدیت گھلی
پس ِ نقوش بھی میں دیکھنے پہ قادر تھا
کارِ عبث رہی ہیں جنوں کی وکالتیں

اشتہارات