اردوئے معلیٰ

Search

جب سے نگاہِ سیدِ ابرار ہو گئی

سوکھی تھی شاخ دل کی ثمر بار ہو گئی

 

کب سے خزاں رسیدہ تھی یہ زندگی مری

رحمت کے پھول کھل گئے گلزار ہو گئی

 

اب ہو رہی ہے عشقِ نبی میں بسر حیات

صد شکر میری روح بھی سرشار ہو گئی

 

جب سے ثنائے سرورِ دیں سے ہوا ہے پیار

الجھی ہوئی جو سوچ تھی ہموار ہو گئی

 

اک رات آپ خواب میں جلوہ دکھا گئے

قسمت جو سو رہی تھی وہ بیدار ہو گئی

 

دنیا کی نعمتوں کی بھی چاہت نہیں رہی

بس آپ ہی کے در کی طلب گار ہوگئی

 

رکھی جبیں جو ناز نے چوکھٹ پہ آپ کی

ایسی چمک پڑی کہ پُر انوار ہو گئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ