اردوئے معلیٰ

Search

جب مدینے میں کبھی اہلِ نظر جاتے ہیں

سرنگوں اور بہ صد دیدۂ تر جاتے ہیں

 

کیا بتائیں جو گزرتی ہے سرِ قلبِ حزیں

ہم مدینے سے پلٹتے ہوئے مر جاتے ہیں

 

طائرِ سدرہ کے پر جلتے ہیں جس سے آگے

اُس سے آگے وہ خدا جانے کدھر جاتے ہیں

 

خوشبوؤں سے وہ گزر گاہ مہک اُٹھتی ہے

آپ جس راہ سے اک بار گزر جاتے ہیں

 

لینے خیرات ترے خوانِ مطہر سے فقیر

سر بہ خم کاسہ بہ کف عشق نگر جاتے ہیں

 

بر سرِ صفحۂ قرطاس محمد جو لکھوں

رنگ اور نور سے الفاظ نکھر جاتے ہیں

 

شوقِ نظّارہ لیے عرشِ عُلا سے قدسی

سر بہ سر در پہ ترے شام و سحر جاتے ہیں

 

جب ترے حسنِ مکمل کا چھڑے ذکر شہا

منظرِ ہستیِ ناقص بھی سنور جاتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ