اردوئے معلیٰ

Search

جب ہم اِدھر سے حرفِ ثناء لے کے چل پڑے

قدسی اُدھر سے ٹھنڈی ہوا لے کے چل پڑے

 

مشغولِ سجدہ قلب و نظر ہیں ترے حضور

ایسے میں کاش آئے قضا لے کے چل پڑے

 

جب آپ مسکرائے تو گلشن سے یک بیک

موسم خزاں کے اپنی ادا لے کے چل پڑے

 

آگے کیا حضور کی نسبت کو حشر میں

پھر پیچھے پیچھے اپنے حوالے کے چل پڑے

 

گزرا خیال آپ کا میدانِ قلب سے

غم ایک دوسرے سے دعا لے کے چل پڑے

 

میں نے پکارا دلدلِ عصیاں سے جب انہیں

آئے حضور ، ہاتھ دیا ، لے کے چل پڑے

 

بے خوف ہو کے جائیں تبسم وہ خلد کو

جو لوگ وردِ صلِّ علٰی لے کے چل پڑے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ