اردوئے معلیٰ

جذبوں کی حرف گہ کو ذرا مُعتبر کریں

جذبوں کی حرف گہ کو ذرا مُعتبر کریں

آؤ مدینہ رُو ہوں سخن کا سفر کریں

 

تیرے سوا کہاں سے ملے خوابِ آگہی

تیرے بغیر کس کو طلب کی خبر کریں

 

تُو آ کہ صحنِ دل میں چلے کاروانِ صبح

تُو آ کہ شہرِ جاں کو سپردِ سحر کریں

 

رنگوں کے امتزاج سے بنتے نہیں گُلاب

اِس دشتِ بے نمود پہ آقا نظر کریں

 

بے سمت راستوں میں ہے اُلجھی ہُوئی حیات

اے میرِ قلب و جاں مرے اندر گُزر کریں

 

اِس سر زمینِ شوق کی اتنی سی ہے طلب

بس چشمِ نازنیں کو ذرا سا اِدھر کریں

 

اب تک ہَوا کے ہاتھ پہ رکھے رہے سلام

خواہش ہے اب کہ دل کو کبھی نامہ بَر کریں

 

دل کا ہر ایک زخم ہو پل بھر میں بے نشاں

اک چشمِ التفات اگر چارہ گر کریں

 

منزل ہی آ ملے گی سرِ راہِ اشتیاق

اُن کے نقوشِ پا کو اگر راہبر کریں

 

عالَم تمام عرصۂ وحشت کا ہے اسیر

عصرِ رواں کو واقفِ خیر البشر کریں

 

قاسِم کے ہاتھ میں ہیں عطاؤں کے سلسلے

مقصود حاجتوں کو ذرا پیشِ در کریں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ