اردوئے معلیٰ

Search

جذبِ اظہار سلامت ہے ، سخن ہے آباد

مدحتِ ساقئ کوثر ہے ہمہ خیر کُشاد

 

موجۂ بادِ مدینہ ! کبھی امکان کا لمس

دیر سے وقفِ تمنا ہے کوئی ہجر نژاد

 

وہ ترے شہر کو جاتی ہُوئی احساس کی رَو

وہ ترے کوچے کو وارفتہ رواں حرف کا زاد

 

مہر آثار ترے دشت کے کِھلتے ہوئے رنگ

کُحلِ ابصار ترے شہر کی خاکِ دلشاد

 

اور تو کچھ بھی نہیں ہے ترے مداح کے پاس

جُز تری نعت سے وابستہ سخن زارِ مُراد

 

جس سے مربوط ہیں دارین کی منزل کے نشاں

تا ابد خیر فزا ہے وہ تری راہِ رشاد

 

مژدۂ ساعتِ جلوت ! مرے امکان میں آ

ٹوٹ جائے نہ کہیں تارِ نفَس ، سازِ فواد

 

مہبطِ خیر ہے ، واللہ ، مدینے کی زمیں

ہالۂ نُور ہے لا ریب ، مدینے کا سواد

 

اِک تسلی ہے کہ وہ دیکھتے ہیں ، جانتے ہیں

کافی ہے میرے سخن کو مرے پندار کی داد

 

حیطۂ شوق سے باہر ہے خیالِ مدحت

محوِ تدبیرِ تمنا ہیں قلم اور مداد

 

اُن کو مقصودؔ عنایت کی نظر ہے زیبا

درگہِ ناز میں حاضر ہے دلِ شوقِ نہاد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ