اردوئے معلیٰ

Search

جذبۂ عشق نے سینے میں مچلنا سیکھا

آپ آئے تو زمانے نے سنبھلنا سیکھا

 

گُنگ لمحوں کو ہوئی قوتِ اظہار عطا

دامنِ خیر میں حق بات نے پلنا سیکھا

 

کفر اور شرک کے سب بُت ہوئے ریزہ ریزہ

حق کے انوار میں ظلمات نے ڈھلنا سیکھا

 

پہنا انسان نے اس وقت لباسِ عظمت

سایۂ خیر میں جب صِدق نے پلنا سیکھا

 

پائی بھٹکے ہوئے انساں نے یقین کی منزل

نورِ قرآن نے سینوں میں اُترنا سیکھا

 

ہوئی سیراب زمانے کی یہ ویراں دھرتی

چشمۂ حق نے مدینے سے ابلنا سیکھا

 

ملی بے راہ زمانے کو قیادت ان کی

راہِ تہذیب پہ انسان نے چلنا سیکھا

 

آپ کے دم سے سہارے ملے بے کس دل کو

نئے انداز سے دنیا نے سنبھلنا سیکھا

 

ظلمتِ دَہر نے پھر دیں کے اُجالے دیکھے

شمعِ توحید نے جب طیبہ میں جلنا سیکھا

 

دے گئے دیر کو وہ درسِ اُخوت خالد

پیار کے رنگ میں نفرت نے بھی ڈھلنا سیکھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ