اردوئے معلیٰ

السلام اے باعث تجدیدِ وحدت السلام

باعثِ تجدیدِ توحید و رسالت ! السلام

 

السلام اے رفعتِ بامِ امامت السلام

السلام اے رافعِ عرشِ شہادت السلام

 

محورِ رشد و ہدایت مرکزِ صدق و صفا

ابنِ مولودِحرم ! محبوبِ محبوبِ خدا

 

اے کہ تو ناز رسالت، نازشِ دوشِ رسول

اے کہ تو دستِ یداللہ ، تو جگر بند بتول

 

عہد طفلی میں بھی وہ تیری شہادت کا جمال

لائے ملبوسِ شہابی ، جبرئیلِ تیز بال

 

گرم تھے تیرے لہو سے دوش و آغوش رسول

قرّۃِ عینِ علی اور قرّۃِ عینِ بتول

 

زینتِ دوشِ حبیبِ کبریاء تو ہی تو ہے

باعثِ طولِ سجودِ مصطفےٰ تو ہی تو ہے

 

تیرا جانا قریۂِ شاہِ مدینہ چھوڑ کر

ناخدا جیسے چلا جائے سفینہ چھوڑ کر

 

راہِ تسلیم و رضا کو یاد تیری آ گئی

جادۂ صبر و رضا کو یاد تیری آ گئی

 

قاسم و عون و محمد، حضرتِ عباس تھے

اکبر و اصغر جگر پارے ابھی تو پاس تھے

 

کس نے چھلنی کر دیا قرآں کو خونیں تیر سے

کس نے کاٹا آیۂِ تطہیر کو شمشیر سے

 

تو سراپا دین ہے ابنِ رسولِ کائنات

کس طرح بیعت طلب ہاتھوں میں جاتا تیرا ہات

 

کربلا میں ہمزباں صبر و رضا سے ہو گئی

کوثر و تسنیم کے والی ! تری تشنہ لبی

 

آج جی بھر کے غمِ ابنِ علی میں روئیے

نامۂِ اعمال اپنا آنسؤوں سے دھوئیے

 

اشکِ پیہم ہی غمِ شبیر کے اوصاف ہیں

اشکِ پیہم ہوں تو اپنی جنتیں الفاف ہیں

 

میں ضیائے مہرِ تاباں ہو نہ میں ماہِ تمام

یہ تو ہے ناچیز کی اک جرأتِ عرض سلام

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات