اردوئے معلیٰ

جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​

جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​

سوچتا ہوں میں وہاں مدحت سرا کیونکر ہوا

 

​ساقیِ کوثر کا لطفِ خاص جب مجھ پر ہوا​

بادہء انوار سے پُر ذہن کا ساغر ہوا​

​ 

آپ جب جلوہ فروزِ مسندِ امکاں ہوئے

ذرہ ذرہ آئینہ دارِ شہِ خاور ہوا​

​ 

ہے مسلسل نکہت و انوار کی بارش وہاں

جس نگر ، جس انجمن میں ذکرِ پیغمبر ہوا​

​ 

جب کبھی برداشت سے باہر ہوئی فرقت کی دھوپ​

سایہ افگن دامنِ رحمت وہیں مجھ پر ہوا

​ 

ان کے در سے مل گیا پروانہء بخشش مجھے​

مجھ سے عاصی پر بھی لطفِ شافعِ محشر ہوا​

​ 

وجہِ تکوینِ جہاں کی نعت لکھی جب ایاز​

آئینہ ایک ایک حرفِ کُن فکاں مجھ پر ہوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ