اردوئے معلیٰ

Search

جس خاک سے بنے تھے ہم اُس خاک پر گرے

شاخِ شجر سے ٹوٹ کے جیسے ثمر گرے

 

سونپی ہیں راہِ شوق نے وہ وہ امانتیں

کاندھوں سے رہ نورد کے زادِ سفر گرے

 

آیا ہے کس کا نام یہ نوکِ قلم پر آج

کاغذ پر آ کے سینکڑوں شمس و قمر گرے

 

خاشاک بن گئے ہیں ہواؤں کے ہاتھ میں

اپنی جڑوں سے ٹوٹ کے جتنے شجر گرے

 

گھر ٹوٹنے کا سانحہ عریاں سا کر گیا

جامے گرے بدن سے کہ دیوار و در گرے

 

پرچم نہیں ہے، ورثۂ اسلاف ہے ظہیرؔ

پرچم گرا تو جانیئے پُرکھوں کے سر گرے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ