اردوئے معلیٰ

جمالِ عرشِ معلیٰ بِنائے ہفت اقلیم

جمالِ عرشِ معلیٰ بِنائے ہفت اقلیم

سلام تجھ پہ ہزاروں، حبیبِِ ربِّ کریم

 

نگارِ شعر پہ صد برگ کھلنے والے ہیں

خیالِ نعت کو چھُو کر گئی ہے بادِ شمیم

 

فرازِ عرش پہ بیری کا پیڑ لام کی حد

پھر اس کے آگے ہیں تا لامکاں الف اور میم

 

جبین مانگتی ہے جس کے نعل کی مٹی

سلام کرتا ہے اس کی جبیں کو عرشِ عظیم

 

تو کیوں نہ نکہتیں زلفِ نبی کا پانی بھریں

غلام عنبر وسنبل ، کنیز موجِ نسیم

 

وہ آفتاب ہوئے چرخِ دین و دنیا پر

متاعِ اُنس نے رخشاں کئے جو دُرِّ یتیم

 

طوافِ بوُئے نبی میں تھی عنکبوت اگر

تو سانپ دید کی خاطر پہاڑ میں تھا مقیم

 

وہاں پہ لشکرِ الفیل کی مجال ہی کیا

جہاں پہ اڑتے پرندے ہیں پاسبانِ حریم

 

رکھا جو زانوئے صدیقؓ پر حضور نے سر

بڑھی ہے لطفِ رفاقت سے اور شانِ ندیم

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ