جونہی ان کا نام لیا ہے

جونہی ان کا نام لیا ہے

سُونا دل آباد ہوا ہے

 

جب سے ان کا دامن تھاما

بگڑا ہوا ہر کام بنا ہے

 

خالق کا احسان ہے ہم کو

محبوبِ ذیشان دیا ہے

 

قریہ قریہ بستی بستی

ان کی رحمت کا چرچا ہے

 

کر دو کرم یا شاہِ مدینہ!

بندۂ خستہ در پہ پڑا ہے

 

بخش دیا یہ کہہ کر حق نے

میرے نبی کا مدح سرا ہے

 

شکر ہے قدرت نے آصف کو

نعتِ نبی لکھنے کو چُنا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سنا ہے شب میں فرشتے اُتر کے دیکھتے ہیں
ایسا تجھے خالق نے طرح دار بنایا
رحمت نہ کس طرح ہو گنہگار کی طرف
حضورِ کعبہ حاضر ہیں حرم کی خاک پر سر ہے
مرے آقاؐ، کرم مُجھ پر خُدارا
آپؐ کے پیار کے سہارے چلوں
نبیؐ کا گُلستاں ہے اور میں ہوں
ذکرِ نبیؐ سے ہر گھڑی معمُور ہوتا ہے
نہیں بیاں کی ضرورت، حضور جانتے ہیں
کمال اسم ترا، بے مثال اسم ترا

اشتہارات