اردوئے معلیٰ

Search

جونہی سرِّ رفعنا نطق کو تعلیم ہوتا ہے

مری ہر فکر کا مرکز وہ نوری میم ہوتا ہے

 

نگاہیں خم کیے بیٹھوں درِ آقا پہ دو زانوں

کہ اس دربار سے رزقِ ثنا تقسیم ہوتا ہے

 

ادائے صیغۂ کن سے ہزاروں سال پہلے ہی

وجودِ حضرتِ خیر الورٰی تجسیم ہوتا ہے

 

حجر ان کی گواہی دیں، شجر جھک کر سلامی دیں

بہ یک جنبش چمکتا چاند بھی دو نیم ہوتا ہے

 

سند ہے یہ، خدا سے وہ جدا ہرگز نہیں لوگو

کہ ذکرِ مصطفٰی ہی بعدِ ہر تحریم ہوتا ہے

 

سبب اِس کا بنے گی نعت گوئی مدح سامانی

جو روزِ حشر یہ بندہ وہاں تسلیم ہوتا ہے

 

عجب ہی اوج پر ہوتا ہے یہ زورِ سخن منظر

قلم سے حرفِ مدحت جب مرے ترقیم ہوتا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ