اردوئے معلیٰ

Search

جو ان کے در پر جھکا ہوا ہے

فلک پہ گویا کھڑا ہوا ہے

 

جو اٹھ گیا ہے درِ نبی سے

وہ ذلتوں میں گرا ہوا ہے

 

جڑا ہوا ہے جو ان کے در سے

اسی پہ عقدہ کھلا ہوا ہے

 

اگر وہ راضی خدا بھی راضی

بڑوں سے ہم نے سنا ہوا ہے

 

بھنور کی زد میں ہے میری کشتی

فراتِ عصیاں چڑھا ہوا ہے

 

حضور! دستِ کرم سے تھا میں

وگرنہ غرقاب ہو چلا ہے

 

غلام، عاجز، خجیل، نادم

درِ نبی پر کھڑا ہوا ہے

 

ابھی تو مانگا نہیں ہے لیکن

یہ میرا دامن بھرا ہوا ہے

 

جلیل ناصح بھی تھک چکے ہیں

تو اپنی ضد پر اڑا ہوا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ