جو دیکھا ترا نقشِ پا غوثِ اعظم

جو دیکھا ترا نقشِ پا غوثِ اعظم

تو خم ہوگیا سر مِرا غوثِ اعظم

 

نہیں بادشاہوں سے کم اس کا رتبہ

ترے در کا ہے جو گدا غوثِ اعظم

 

کہیں اس کو جانے کی حاجت نہیں ہے

جسے مل گیا در ترا غوثِ اعظم

 

ملا مجھ کو دامانِ شاہِ مدینہ

جو دامن ترا مل گیا غوث اعظم

 

عجب کیا ؟ کسی روز آجائیں یونہی

مرے سامنے برملا غوثِ اعظم

 

قدم کس کا ہے گردنِ اولیا پر ؟

یہ اعزاز کس کو ملا غوثِ اعظم ؟

 

نہیں قید اپنے پرائے کی کوئی

تو سب کا ہے حاجت روا غوث اعظم

 

ترے سامنے جب بھی دامن پسارا

ملا ہے طلب سے سوا غوث اعظم

 

جو سیراب رکھے مری کشتِ جاں کو

وہ ابرِ عطا ہے ترا غوثِ اعظم

 

مدد کیسے آتی ہے پھر دیکھنا تم

پکارو ذرا دل سے یا غوث اعظم

 

مجیبؔ آکے چومے ترے سنگِ در کو

ہے میری یہی التجا غوثِ اعظم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ