اردوئے معلیٰ

Search

جو غلامِ شہِ ابرار ہُوا خوب ہُوا

وقت کا اپنے وہ سردار ہُوا خوب ہُوا

 

ان کے در کا جو نمک خوار ہوا خوب ہوا

اس کی ٹھوکر میں یہ سنسار ہوا خوب ہُوا

 

گنبدِ سبز پُر انوار ہُوا خوب ہُوا

رشکِ فردوس وہ دربار ہُوا خوب ہُوا

 

مُسکرا دے جو اندھیرے میں سُوئی مِل جائے

شاہِ دِیں منبعِ انوار ہُوا خوب ہُوا

 

طائرِ سِدرہ اگر جائیں تو پر جل جائیں

جانا سرکار کا اُس پار ہُوا خوب ہُوا

 

مرحمت اس کو سبھی عِلمِ خفی اور جلی

خوب ہر شے سے خبردار ہُوا خوب ُہُوا

 

ورفعنا لک ذِکرک کی بہاریں دیکھو

ذکرِ سرکار چمکدار ہُوا خوب ہُوا

 

سرِ بالیں جو اگر دیکھنے کو وہ آئیں

کتنا خوش بخت وہ بیمار ہُوا خوب ہُوا

 

پیروی اُن کی کرے جو بھی ہدایت پائے

میرے سرکار کا جو یار ہُوا خوب ہُوا

 

ان کے قدموں میں گِرے خون کے پیاسے آ کر

شاہِ کونین کا کردار ہُوا خوب ہُوا

 

مدحتِ شاہ میں مِنقار جو مرزا کے کُھلے

ان کی رحمت کا یہ حقدار ہُوا خوب ہُوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ