اردوئے معلیٰ

Search

جو لکھنا ہے اسے توصیفِ شبّر

پئے تعظیم خامہ ہے نگوں سر

 

پسر وہ فاطمہؓ کا نیک اختر

حسینؓ ابنِ علیؓ سبطِ پیمبر

 

حسین ایسے کہ حسن ان پر نچھاور

نگاہِ عشق قرباں ہر ادا پر

 

گلِ عارض مہکتے دو گلِ تر

لبِ خنداں ہیں یا یاقوتِ احمر

 

گریباں میں چھپے گر صبحِ انور

پنہ زلفوں میں لے شامِ معطر

 

درِ دولت کا کیا کہنا وہاں پر

فرشتے بھی کھڑے رہتے تھے اکثر

 

محمد مصطفیٰ کے وہ تھے دلبر

کہاں سے آئے کوئی ان کا ہمسر

 

رہے ان کے ہی زیرِ سایہ اکثر

سرایت کر گیا سب خلقِ اطہر

 

شباب آیا تو نکلے وہ قد آور

جھکے تعظیم کو سر و صنوبر

 

قدم بوس ان کا تھا بختِ سکندر

عطائے رب زہے اوجِ مقدر

 

سراپائے وفا وہ صبر پیکر

وہ مردِ متقی دل کا تونگر

 

شہادت گاہِ الفت کا سپہ گر

شجیع و شیر دل مردِ دلاور

 

مصافِ حق کا وہ دلدوز منظر

شہیدِ راہِ حق اللہ اکبر

 

کیا جامِ شہادت نوشِ جاں اف

جو پیاسے تین دن سے تھے برابر

 

انہیں پانی کی حاجت بھی کہاں تھی

لگا ہونٹوں سے تھا جب جامِ کوثر

 

سلامِ خادمانہ سب کا پہنچے

محمد اور آلِ مصطفیٰ پر

 

خلافِ حق جو ان کے منہ کو آئے

وہ ظالم وہ سیہ رو وہ ستم گر

 

جہنم کا وہ ایندھن تا ابد ہیں

رہی دنیا تو اس میں خوار و ابتر

 

پڑا گردن میں ان کی طوقِ لعنت

نحوست ہی نحوست ان کے اوپر

 

ملا جو درس ہے ابنِ علیؓ سے

وہ بابِ عشق میں ہم سب کو رہبر

 

نہ آئے آنچ دیں پر جان جائے

پئے خوشنودی خلاقِ اکبر

 

برائے حق ستیزہ کار ہونا

برائے دینِ حق سب کچھ نچھاور

 

نہ کام آئے منال و مالِ دنیا

خدا اعمال پوچھے روزِ محشر

 

یہ دنیا کیا فقط ہے دھوپ چھاؤں

تماشہ دیکھنا ہے اس کا دم بھر

 

پڑھیں جب داستانِ کربلا کو

جو اسوہ ان کا ہے اس پر نظرؔ کر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ