اردوئے معلیٰ

جُنوں میں دامنوں، جیبوں، گریبانوں پہ کیا گزری

یہ سب دیکھیں کہ دیکھیں تیرے دیوانوں پہ کیا گزری

 

فنا کے ہاتھوں کیسے کیسے انسانوں پہ کیا گزری

شہنشاہوں پہ، سلطانوں پہ، خاقانوں پہ کیا گزری

 

ہمارے کعبۂ دل کی ارے ویرانیاں توبہ

صنم خانوں میں رونق ہے، صنم خانوں پہ کیا گزری

 

زمانہ کی قسم مجھ کو زمانہ خود ہی شاہد ہے

کہ انسانوں کے ہاتھوں سے ہی انسانوں پہ کیا گزری

 

اسیرِ زلفِ پیچاں ہیں، قتیلِ چشمِ جاناں ہیں

خدا کے ان ثنا خوانوں مسلمانوں پہ کیا گزری

 

انہیں کی خاک اڑ اڑ کر بتاتی ہے زمانے کو

کہ نمرودوں پہ، فرعونوں پہ، ہامانوں پہ کیا گزری

 

ترے جانے سے ساقی نظمِ میخانہ ہوا برہم

کہیں کیا مے کشوں، میناؤں، پیمانوں پہ کیا گزری

 

غبارِ راہِ منزل ہے نہ آوازِ درا باقی

سرِ منزل نہ پہنچے تھے حدی خوانوں پہ کیا گزری

 

بقدرِ وسعتِ ظرفِ نظرؔ احساسِ غم بھی ہے

جو ہشیاروں پہ گزری ہے وہ نادانوں پہ کیا گزری

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات