جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں

جِس آستاں پہ میری جبیں کا نشاں نہیں

وہ اور آستاں ہے، ترا آستاں نہیں

 

وہ اضطراب و شوق، وہ طرزِ بیاں نہیں

میری زباں نہ ہو تو میری داستاں نہیں

 

تیرا خیال ،تیرا تصور، ترا جمال

کیوں کر کہوں شریکِ غم جاوداں نہیں

 

کیوں بارہا سجائے گئے تیرے بام و در

کیا اب بھی شوق دید مرا کامراں نہیں

 

کچھ لوگ لوٹ آئے یہ کہتے ہوئے ضیاؔء

اب اہلِ گلستاں کے لئے گلستاں نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ