’’جہاں بانی عطا کر دیں بھری جنت ہبہ کر دیں ‘‘

 

’’جہاں بانی عطا کر دیں بھری جنت ہبہ کر دیں ‘‘

وہ بِن مانگے گدا کو نعمتِ عظمیٰ عطا کر دیں

شہِ کوثر غم و آلام کو دل سے فنا کر دیں

’’نبی مختارِ کل ہیں جس کو جو چاہیں عطا کر دیں ‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

نقشِ نعلینِ کرم سے ہیں جہاں میں رونقیں
کیوں طبعیت خود بخود ہے گھبرائی ہوئی
نعتیہ اشعار ( اشعار متفرقات )
سرکارؐ تہی دست ہوں میں بے سروساماں
آپؐ سے لو لگائے رہتے ہیں
قلم کار و سُخن ور آپؐ کا ہوں
درِ سرکارؐ پر جائیں، سکوں پائیں اماں پائیں
درِ سرکارؐ در فیض و عطا کا
’’واہ کیا جوٗد و کرم ہے شہِ بطحا تیرا‘‘
’’تیری نسلِ پاک میں ہے بچّہ بچّہ نوٗر کا‘‘

اشتہارات